ایک غزل!

 

موسم بدلنے کی حیرت نہیں جاتی           

ایک خواب ٹوٹنے کا ملال نہیں جاتا       

 

وقت نام کا گہن…. کسے نہیں لگا؟

کون کہتا ہے کبھی زوال نہیں آتا؟

 

سچ کیا ہے اور اسکی معیاد کتنی؟                 

کیا کسی کو یہ سوال نہیں ستاتا؟

 

آگہی ایک دلکش حادثہ سا ہو گئی          

یقین کو چوٹ کا احتمال نہیں ڈراتا.            

 

ایسی آزمائشوں سے گزر گیا کہ اب               

ضبط کوکوئی سراپا جمال نہیں بہکاتا

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s