خواب کا سورج تھا اسے ڈهلنا تھا….

انجام جانتے ہوئے سمندر کے گهر گیا
وہی ہوا، میں ان آنکھوں میں گهر گیا

 

خواب کا سورج تھا، اسے ڈهلنا تھا

تکمیل کی چاه میں وه مر گیا

 

انتظار کهڑکی میں سر پٹختا رہا 

مگر چاند تو پانی میں اتر گیا! 

 

کوئی ٹهکراتا رہا خوش رنگ پهول

کوئ جهومتا کانٹوں سے گزر گیا        

 

بہت دیر جنوں میں صدا لگاتا رہا

پھر وہ دیوانہ نجانے کدهر گیا؟               

 

یوں والہانہ ملا میں ایک یاد سے

کہ اپنے ہی وجود میں بکهر گیا                      

 

ماتم ہی سہی، سلیقے سے ہو                   

ٹوٹنے سے پہلے میں سنور گیا

                         

کوئی مجھے مجھ سے الگ کرے

اس خالی پن سے اپنا دل بهر گیا

 

Advertisements

2 thoughts on “خواب کا سورج تھا اسے ڈهلنا تھا….

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s