” سوچتے ہیں”

826fa379771c6e554621873559ac137c
“Wishful Thinking” by Kim Whitton

محبت کو زیست کا استعارہ سوچتے ہیں

جیسے ڈوبنے والے کنارہ سوچتے ہیں

عمر بهر جو ساتھ چلے گا وحشتوں میں

ہم مبتلا ایسا پائندہ ستارہ سوچتے ہیں

ارادے کو پاس انا نہیں یا وہ دلنواز بہت

کیوں ہے نفی زات گواراہ سوچتے ہیں

ہر مشام جان میں فروزاں ایک یاد کی لو

رہےراکهہ میں زندہ شرارہ سوچتے ہین

  اب گفتگو ممکن نہیں رہی لفظوں میں

اب سخن ور انکہی کا اشارہ سوچتے ہیں

ترک معاملات پر شکست دل کیسی ہے

کس طور سمٹے گا خسارہ سوچتے ہیں

بے سمتی ہی راہبری کرے تو کرے

غیر معتبر ہے یقین کا سہارا سوچتے ہیں

Advertisements

4 thoughts on “” سوچتے ہیں”

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s