“I c a r u s”

 

Image

 

How to paint the parched lips of desolation, red?

And watch the lush swell of my hope

Singing the forgotten songs of love.

How to ink your soul-awing name

On the feverish body of my patience?

And witness the sudden egress of a full moon

In the desert of my heart.

How to sculpt you immortal

When the delightful features of love are invisible?

When I’m fading under your shadow,

When your shadow barricading my vision.

How to contain your onslaught

When an esurient desire floods my veins?

And I become a fire that’s sinking deep in waters,

Taking shores along with her,

Setting its depths, ablaze.

How to reverse the clock

And steal you from the moment of separation?

From the distance that never allowed me

To step out of your possessive arms?

How to kiss your wanton scent,

Walking seductively on the streets?

Climbing up the balcony of my room,

Scaling the walls of my thoughts

Hiding in the folds of my nightgown.

How to fill my days & nights with you, again?

To sprinkle you on me,

And melt myself in this surge of you?

To drag you out of you

And bury myself, infinitely,

In your adamant enticement?

How to provoke your fury?

To have you raven this distance between us?

Like mad tides in search of their beloved pearl

Devour rocks & vales.

How to tell you?

“Stay afire like you carry a million fulgent suns,

I’m your insatiable Icarus!”

 

 

بہار

cf2e4aad24611cfdc90920d45516bac1
spring mood by Nuno Milheiro

جاتے فروری کی یہ سرکش شام

       اتراتی ہوئی در فلک سے جهانکتی ہے

سورج کا الوداعی بوسہ

آسمان پر گلنار ہے

اور دو وقت ایک دوسرے کی باہوں میں

شفق رچے سرمئ مکالمے گنگناتے ہیں

یہ ہم آغوشی گہری ہوتے ہوتے

ایک ہی قالب میں ڈهل جائے گی

سیاہ..ستاروں کے ملبوس میں

چاند کو ماتهے پہ مہراب کئیے

بہار آدهے کهلے پهولوں کی

اوٹ سے جهانکتی ہے

اور مہکتی ہواؤں کے جال یوں پهینکتی ہے

کہ مدفن دلوں کے لئیے

امنگیں، دھڑکنیں ڈهونڈ لاتی ہے

کیا یہ ممکن ہے کہ دل زندہ ہو

اور تمہارے خیال کی لہریں

مجھے اپنی محبت کے

سمندر میں نہ کھینچ لے جائیں؟

تو اچانک سے یہ پگڈنڈی

مجھے راہ جنت سے بهی ارفع

لگنے لگی ہے

تمهارے قدموں کی ماوراءدنیا چاپ

میری حسیات میں

سفید کنول کی مانند

کهلنے لگی ہے

آؤ سامنے آؤ

روح ونظر کے باب بیتاب

منتظر منتشر ہم مثال سیماب

آؤ کہ تمہارا آیتوں سا سواگت کروں

سجدہ چشم سلام شنگرفی لب

یقین کامل کی آنچ میں پگهلے ہوئے نزرانے تمہارے

آؤ کہ غالب کے شعروں سا سراہوں تمہیں

ہر لفظ ہزار داستان

ہر غزل اسرار کائنات جیسی

اک خوشگوار حیرت میں تمہیں پڑہتی جاؤں بہکتی جاؤں

آؤ فیض کی نظموں کی طرح

تمہاری گرمجوش مگر مترنم لے میں

زماں ومکاں کی بندشیں جھٹلاؤں

آؤ اس راستے پہ

آؤ فرقت کے عدم سے وجود وصال میں

 آؤ اس پل صرف تمہاری مشکبار یاد سے

دل نہیں سنبهلتا وقت نہیں بہلتا

آؤ میری بہار مجھ میں

میری روح سے ہمکلام ہو

گل احمریں کی طرح

میں تمہاری آمد کی عید مناؤں

تمہاری سورج مکھی ہو جاؤں

یوں کہ تمہارا نزول میری شروعات ہو

اور تمہارے اختتام پہ ہی تمام ہو جاؤں