Retrospection

 I’ve loved you
Without inhaling the peculiar aroma
Of your quenching presence
Or licking the honey of your name
When the electrifying sadness
Of your obsidian eyes
Hadn’t absorbed my heartbeats
Your heaven crusted voice wasn’t a softly
Cutting edge of madness,

Ruining & recreating me

I’ve loved you
Since I was a naive youngling,
And carnality wasn’t imbuing persuasion
Then, this world was a carnival,
Celebrating the gilded onset of summer
A nest, cozily nestled amid bushes
Of the highest tree
Which could extend its leafy lips
To hold the moon in them
And draw her light in his solemn veins

I’ve loved you

When premonitions hadn’t clogged the flow of my smiles

When poison was just a substance

To extinguish a body
When other kinds of poisons were not known
Separation was like a grey blanket of winter’s fog
Its innate agitation hadn’t pecked at my chest
Yet I knew
There will be a poison & lacerations
I’d thought you as a purifier
To redeem the choices I would make later
That ungrasped wait for baptism
prayed for you, unknowingly
Without drowning in your monsoon embrace
I’d loved the enticing breeze
of footsteps of your soul
Reaching out to me, slowly
Through the small opening in time’s blue window
The window which lies between the two worlds
– Heaven & the Earth
Us & …… you, me.

There are things we don’t always know. There are things which stay with us, dormant, & suddenly something activate them. Then we look back & find the subtle signs of their forever and silent presence. Here’s to them ‘things

“U N I O N”

It’s a dedication to a couple, newly wedded & happily in love. A love story that transformed into a union. May love stay vigilant to protect them in their journey of life.

Murmurs of kisses scattered in a sated pile
Clung to wrinkled pillows & terrace willows
Humming in rain droplets or humid nights
The world smells like spring & a hyacinth smile

In the lighthouse of faith, distrust is forbidden
Separation is a shadow ostracised by us
Bonfire of dreams lights up our inner fortress
Roots of love peek from their cave hidden

An eternity brims in every moment, together
Shyness stains cheeks yet the heart is gallant
His scent & skin are intimately resplendent
Knowing, I own his heart, is a joy splendour

ہمیں آئینِ مصلحت سے انکار سا۔۔۔۔۔

  

 It’s a dedication to a very dear friend Aima Yousaf Jamal. My best wishes & this ghazal for her.

روح کو سیراب کرتا، وہ بہار سا
بیچ ریگزارِ حیات کے، گُلزار سا

قُربت میں عیاں جُدائی کےرنگ
خُوشی میں ہونی کا انتظارسا

کبھی مجھے یہ حُجتیں بُھولیں
کبھی وہ بھی ہو بے اختیار سا

سمجھوتا اُسکا مسلک نہیں ہے

ہمیں آئینِ مصلحت سے اِنکار سا

ساتھ چلے مگر اپنا خول اوڑھے

ہر قدم میں شامل استفسار سا 

 وہ جو ہے میری دُعا و دوا بھی

رکھے مجھے مثلِ طفل بے قرار سا

یہ عشق اس عمر سے طویل ہے

زندگی سے ماورا یہ انتظار سا

اک بے فیض کارِ وفا

 

 

چاہِ وصل بس مہمیزِ سفر ہے

جو ہمقدم ہے وہ تو ہجر ہے

خوداحتسابی کا خوف نہیں

 خلش، اہلِ ایمان کو مگر ہے

ظلم حد سے بڑھا تو مِٹے گا


کیا میرے مسیحا کو خبر ہے؟

دعوی پارسائی اپنا طرز نہیں

ہمارا تو مےخانے سے گزر ہے

اک بے فیض تعلق نِبھاتے ہیں

 یہی اپنی بندگی، زہد و ذِکر ہے

وہ خراجِ تبسم وصوُل کرتے ہیں

ہمیں کیوں غم بانٹنے کی فکر ہے

جو بیتاب ہے وہ چھلکتا نہیں

اِک اشکِ تمنا میں بلا کا صبر ہے

 

Dystopia

You’re a violet rose
Regal among thorns
And a munificent charm for my thirst
An exquisite deviation from scarlet magnificence of love
Somehow, love is drawn towards
Your dark blossomed enigma
Your scent is an incantation
Invisibly softening my iron shell
And guarding your vivid velvet petals
The scent is the thief who steals perception
The scent is that guard who doesn’t bow
It’s that delinquency which dictates law of devotion
It’s a defacto romance with freedom
Your purple hubris invokes a tender burst of White flames
I might pluck you
You might kiss & caress my tresses for a day or two
Your scent might keep me inebriated till you stay
It’s achingly beautiful to contemplate
How can I disregard my fear?
I weaved this dream around the Transiency of what we’ve
And immortality of the affliction we’ll be to each other.

A dedication to a regal dream & a pair of rustic eyes.

عہدِ ریا اور میں

اِس عہدِ ریا میں خاموشی ہی امان ہو جیسے
اِنصاف بھی اپنےمنصف سے بدگماں ہو جیسے

حرفِ سچائی بھی باعثِ ملال و دار ٹھہرااب
رواداری کوئی بھوُلی ہُوئی داستان ہو جیسے

جینے کی خواہش رکھنا بھی اِک بارِ گراں ہُوا
رُوح پہ کوئی لازوال ہجر سا مہرباں ہو جیسے

کسی رات تو ہم نے دانستہ چاند کو بجھایا
روشنی کے کارن یقین لُٹنے کا امکان ہو جیسے

اُسکا ذکرِ حُزیں گُفتگُو میں اِس طور آتا ہے
غریب کی کُٹیا میں قیمتی سامان ہو جیسے

کسی اور دُنیا میں وہ آج بھی میرا محور ہے
مجھ میں رہتا اُسکا کوئی قدر دان ہو جیسے

کُچھ ان کہی ہیں کُچھ خُود نمائی کی شیدا
دِل کی باتوں کے بھی پوشیدہ ارمان ہوں جیسے

سنگِ ملامت اُسے داغدار کیا کر پائیں گے
میرا ظرف  تو مغرُور نیلگوں آسمان ہو جیسے

اسیرِ آرزو سے آگہیِ آرزو تک۔۔۔۔۔

اسیریِ آرزو سے نکل گئے بے تاب چاہنے والے
تھےجو کبھی فراوانیِ تشنگی کو سراہنے والے

دو انتہائیںں پیہم رہیں پسِ آئینہِ خود شناسی
ایسےامتحان سے بھی گزرے تیرے نباہنے والے

کارگر رہی حُسنِ سادگی کی نرم خُو قیامت
کِس دلرُبائی سے قتل کرتے رہے رِجھانے والے

اُن میں دوست ڈھونڈنا رائیگاں دل لگی تھی
بظاہر ملے بہت گرمجوشی سے، مُسکرانے والے

ہر صدا شرفِ پذیرائی کی راہ میں خاک ہوئی
تہی داماں رہ گئے خاموشی سے پُکارنے والے

بےتوقیریِ خلوص نے لکھے عنوانِ بے نیازی
ایسے کڑے باب سے گُزرے رستہ بدلنے والے

خیر ہو جنوںِ بلا خیز کو متاع کہنے والوں کی
وہ کافرِ رُو سیاہ وہ رُوئے عشق سنوارنے والے

Dedicated to the satisfaction & hurt of knowing.