اسیرِ آرزو سے آگہیِ آرزو تک۔۔۔۔۔

اسیریِ آرزو سے نکل گئے بے تاب چاہنے والے
تھےجو کبھی فراوانیِ تشنگی کو سراہنے والے

دو انتہائیںں پیہم رہیں پسِ آئینہِ خود شناسی
ایسےامتحان سے بھی گزرے تیرے نباہنے والے

کارگر رہی حُسنِ سادگی کی نرم خُو قیامت
کِس دلرُبائی سے قتل کرتے رہے رِجھانے والے

اُن میں دوست ڈھونڈنا رائیگاں دل لگی تھی
بظاہر ملے بہت گرمجوشی سے، مُسکرانے والے

ہر صدا شرفِ پذیرائی کی راہ میں خاک ہوئی
تہی داماں رہ گئے خاموشی سے پُکارنے والے

بےتوقیریِ خلوص نے لکھے عنوانِ بے نیازی
ایسے کڑے باب سے گُزرے رستہ بدلنے والے

خیر ہو جنوںِ بلا خیز کو متاع کہنے والوں کی
وہ کافرِ رُو سیاہ وہ رُوئے عشق سنوارنے والے

Dedicated to the satisfaction & hurt of knowing.

Advertisements

5 thoughts on “اسیرِ آرزو سے آگہیِ آرزو تک۔۔۔۔۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s