اک بے فیض کارِ وفا

 

 

چاہِ وصل بس مہمیزِ سفر ہے

جو ہمقدم ہے وہ تو ہجر ہے

خوداحتسابی کا خوف نہیں

 خلش، اہلِ ایمان کو مگر ہے

ظلم حد سے بڑھا تو مِٹے گا


کیا میرے مسیحا کو خبر ہے؟

دعوی پارسائی اپنا طرز نہیں

ہمارا تو مےخانے سے گزر ہے

اک بے فیض تعلق نِبھاتے ہیں

 یہی اپنی بندگی، زہد و ذِکر ہے

وہ خراجِ تبسم وصوُل کرتے ہیں

ہمیں کیوں غم بانٹنے کی فکر ہے

جو بیتاب ہے وہ چھلکتا نہیں

اِک اشکِ تمنا میں بلا کا صبر ہے

 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s