ہمیں آئینِ مصلحت سے انکار سا۔۔۔۔۔

  

 It’s a dedication to a very dear friend Aima Yousaf Jamal. My best wishes & this ghazal for her.

روح کو سیراب کرتا، وہ بہار سا
بیچ ریگزارِ حیات کے، گُلزار سا

قُربت میں عیاں جُدائی کےرنگ
خُوشی میں ہونی کا انتظارسا

کبھی مجھے یہ حُجتیں بُھولیں
کبھی وہ بھی ہو بے اختیار سا

سمجھوتا اُسکا مسلک نہیں ہے

ہمیں آئینِ مصلحت سے اِنکار سا

ساتھ چلے مگر اپنا خول اوڑھے

ہر قدم میں شامل استفسار سا 

 وہ جو ہے میری دُعا و دوا بھی

رکھے مجھے مثلِ طفل بے قرار سا

یہ عشق اس عمر سے طویل ہے

زندگی سے ماورا یہ انتظار سا

Advertisements

2 thoughts on “ہمیں آئینِ مصلحت سے انکار سا۔۔۔۔۔

  1. Reblogged this on Here, I Vent Out! and commented:
    A few people have the power to float their way into a friend’s heart and write what they cannot say..
    This is one of those Ghazals. The scrapping of my heart, collected and poured out so eloquently..
    Thank you again Shereen! 🙂

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s