‘Alchemy’

A languidly tranquil noon
A miracle wearing pale amber plumes of warmth_
Undulating itself on walls, on newly verdurous boughs, & on adolescent bodies of flowers_

Dipped in a coral blush smile_ a gossamery
Guarded by a surcease to cocoon its bloom
It’s that unfolding Which gazes back into eyes
When peeking down from a summit
Or staring above at the vastitude of unknown
It’s a fragility trapped in a teary glance
Or mimetic of a laugh of an old gypsy woman
This noon is a gilded homage to
A nigh-sapped winter, Still clinging to the edges
Of a doomed struggle to rekindle the old glory
The scenery hurls white burning javelins Of something familiar
A larger anomaly
Small Hieroglyphs of our own world

Suddenly protruding out of the dunes of time
From behind the tall pines of forgetfulness
You, a merry noon.. fleeting
I, a melting winter… beseeching.

‘Obituary’

When a man ogles at
Another woman
With assessing eyes of an hawk,
Taking in the peculiarity of her features
With a diabolical aim to prey on her supposed immodesty or modesty?
Or something proud in her stance,
To smash it under his masculinity,
To treat her as a wasteyard for his hidden lust,
Which sees every woman
As a paramour
A treasure to be plundered, never cherished
And wants to nibble at
The softness of her flesh,
The warmth of her soul
Only to abandon them later, swiftly.
Telling that she doesn’t deserve preservation,
She’s no heritage.
In one quick flick of cruel eyes
Or whim of a heart,which was nothing
But a beating organ,
He disowns her sacrifices.
Does he know?
The woman beside him
Turns a little rigid
After, during his every new conquest
Does he know
The moulter of blind devotion
She wears for him
Degenerates amid a muffled riot
To pile in a wilting form under her feet
Silently she walks away while holding his hand
Or bearing a title of his last name
A part of her heart stands up
From the sacred prostrate of love
Shaking off an unwanted dust of true submission
_To the idol he was once_
Piece by piece her heart
Repeats the same unholy motion
Repents even more
When Her body yields to him
To carry on the settled decree of serving his needs
Her broken wounded pride
Wraps the newly infidel heart in her courageous wings
And flees her
Only to come back to the cadaver of a former Devotee,
With the curves, marked by a man,
And an unclaimed soul.

ویلنٹائن ڈے پر ایک نظم

شاید ہم محبت کرتے ہیں
مگر اندیشہِ جدائی نے ہمیں
اظہار سے گُمراہ کر رکھا ہے
تبھی تو ہم مِل کر بھی
ایک اندیکھے حصار میں
قید رہتے ہیں
اور تنہائی میں ایک دوسرے کو
اس قدر سوچتے ہیں
کہ ایک زندگی کے
دو ہمسفر ہو جاتے ہیں
بے تحاشہ گُفتگو کرتے ہوئے کبھی
میں اور تُم سے ہم ہو جاتے ہیں
مگر الفاظ اگر لمحہِ اظہار سے
اُلجھ بھی جائیں تو
یہ دامن چُھڑا لیتا ہے
یوں ہم آباد ہونے سے پہلے ہی
برباد ہو جاتے ہیں
بارشوں میں
ہم اکٹھے بھیگنے جاتے تو ہیں
مگر روح کبھی سیراب نہیں ہو پاتی
اور ایک دھیمی دھیمی آنچ
کہیں نمی میں سُلگتی رہتی ہے
کڑی دوپہروں کی وحشت
جب ہمیں ڈرانے لگتی ہے
تو خوف کی بے سائبانی میں
ایک دوسرے کی ردا بن جانے کا
یقین رکھتے ہیں
مگر خود کو مُکمل رکھنے کیلئے
ہم نے محبت کو ادھورا کر رکھا ہے
کہ یہ تکمیل اپنے وجود سے
دستبرداری مانگتی ہے
چہرے پر مُسکراہٹ سجائے
ہم دُنیا کے سامنے جاتے تو ہیں
مگر ہماری آنکھیں
یکساں ویرانی کی سفیر ہیں
وہ ویرانی جو امر بیل کی طرح
ہم میں پروان چڑھتی رہتی ہے
ہمیں دوری میں بھی باہم رکھتی ہے
نئی منزلوں کی دُھن میں بھی
جب ایک دوسرے کو بھُولنے کا
کوئی امکان زادِ راہ نہیں
پھر ہم تم مکینِ شہرِ مہر و وفا
کیوں خود ساختہ جلا وطنی میں رہیں؟
سو تجدیدِ عہدِ وفا کے اس دن
میں اپنے حصے کے اندیشوں سے
منکر ہوتی ہوں
اور تمھاری محبت کو

اپنا ایمان کہتی ہوں
مجھے تم سے محبت ہے
میں تمھیں اپنے دو جہاں کہتی ہوں

Wrote this poem ages ago & shared on some forums too. I’d almost forgotten it, then I found my old journal & it was written there. So felt like blogging it.

قصہِ مُختصر

پسِ آرزو بس ناآسودگی رہ گئی
اک شخص سے یہ نسبت رہ گئی
محبت بھی عجب کُلیہِ افسوں تھا
دلیل سمجھنے میں حجت رہ گئی

سُنو، جنوں فتنہ ہے، ردِ بلا کرو
رنجور و خائف خرد یہ کہہ گئی
حشر صفت ہوں آہستہ گام بھی
تیری فُرقت اپنا ماخذ کہہ گئی

اُمیدِ مہمل، بارِ آگہی، عشق بھی
اے زندگی، تُو کیا کیا سہہ گئی؟
یوں ہوا، مہرِ شجر کے بھرم میں
ننگِ پا، میں سفرِ دشت سہہ گئی

یقین گویا کاغذ کی اِک ناؤ تھی
تلاطمِ وقت سے گھائل، بہہ گئی
موجِ بہار تو سرسری حادثہ تھا
خوشبو اپنی نادانی میں بہہ گئی