قصہِ مُختصر

پسِ آرزو بس ناآسودگی رہ گئی
اک شخص سے یہ نسبت رہ گئی
محبت بھی عجب کُلیہِ افسوں تھا
دلیل سمجھنے میں حجت رہ گئی

سُنو، جنوں فتنہ ہے، ردِ بلا کرو
رنجور و خائف خرد یہ کہہ گئی
حشر صفت ہوں آہستہ گام بھی
تیری فُرقت اپنا ماخذ کہہ گئی

اُمیدِ مہمل، بارِ آگہی، عشق بھی
اے زندگی، تُو کیا کیا سہہ گئی؟
یوں ہوا، مہرِ شجر کے بھرم میں
ننگِ پا، میں سفرِ دشت سہہ گئی

یقین گویا کاغذ کی اِک ناؤ تھی
تلاطمِ وقت سے گھائل، بہہ گئی
موجِ بہار تو سرسری حادثہ تھا
خوشبو اپنی نادانی میں بہہ گئی

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s