درد حد سے سوا ہی رہا

درد حد سے سوا ہی رہا
یہ دریا بھی چڑھا ہی رہا
مرہم نے ڈھارس باندھی تو
ایک زخم مگر کُھلا ہی رہا
بہت روپ زندگی کے دیکھے
محبت کا رنگ جدا ہی رہا
قُربِ آگہی کے تسلسل میں
اک ربطِ نشاط خفا ہی رہا
بظاہر تو کھو گیا وہ شخص
دُعاؤں میں تاہم میرا ہی رہا
جو حدِ بیاں سے بعید تھا
وہ شکوہ بنامِ خُدا ہی رہا

Advertisements

2 thoughts on “درد حد سے سوا ہی رہا

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s