معمہ – نثری نظم

وقت کا، محبت کا
اسراف ظلم ہے
اور ہم نے
تنگ دست انا کا
کاسہ بھرا
جہاں گھر بن سکتا تھا
وہاں بیوپار کیا
سب داؤ پہ لگا دیا
اور زندگی ٹھہری
موقع پرست ساہوکار
ہمارا سب کچھ سمیٹ کر
ہماری مُٹھی میں
تنہائی سے اٹی ہوئی
جیت کا سکہ
تھما کر چلتی بنی
اب ہر نئے موڑ پہ
یہی سِکہ اُچھالنا ہے
اور سوچنا ہے
کس راستے جائیں؟

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s