سرکشی

بستر کی مضطرب شکنوں میں
نیم اندھیری خوابگاہ میں
وحشی طائرِ خواب
اپنے شکستہ پر پھڑپھڑاتا ہے
یہ ناشاد جستجو
لبِ قلب پر نوحے لکھتی ہے
تو ہر شے لایعنیت کے
مختلف اجسام میں
ڈھل جاتی ہے
مصلحتوں کے خلا میں
تیرتے بے مقصد اجسام۔۔
آسمانِ شب بھی
بے انت پھیلاؤ لگنے لگتا ہے
ایک ایسے امتحاں کا
جو ہر اُٹھنے والی نظر کو
اپنے بے نیاز اُجاڑ سے تھکا دے
اور مشرقی اُفق کی رگوں میں
بھڑکتا سبوِ روشن بھی
وقت کے گورکھ دھندے کا
خاموش سودائی ہے
اذنِ جلوہ پائے تو بامِ عرش پہ آئے
مگر طائرِ خواب تو
اپنے شکستہ پروں سے
تختیِ نیند پر لکھتا جاتا ہے
اُڑان چھن بھی جائے تو
آرزوِ پرواز نہیں جاتی
نعرہِ شکیبائی نہیں لگاتی

Advertisements

One thought on “سرکشی

  1. اُڑان چھن بھی جائے تو
    آرزوِ پرواز نہیں جاتی

    So what I met
    the Star only to
    receive the fate
    of the Icarus…

    For I would burn
    thousands more wings,
    to keep afire
    an intent to flutter…

    My wings are not
    to showcase artistry
    or to confess
    the blind passion.

    But they’re for
    my brightest to see
    heart can have,
    a place for the warbler.

    An intent to fly can never be superseded by wing’s distal.
    Thank you, for reminding. 🙂

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s