مختصر نظمیں

‘وہ جانتا نہیں ہے’

اور وہ جانتا نہیں

جدائی ادھ جلا کوئلہ ہے

جو نفس کی زبان پہ رکھے

دشت حیات کمر پہ لادے

میں سر پٹ بھاگ رہا ہوں

ابھی اُس قُطبِ شمالی تک نہیں پہنچا

جو سب برفاب کردے

رگِ جاں بھی

احساسِ زیاں بھی

‘رشتہ’

ہمارے رشتے پر جوبن آ کے جا چُکا ہے

یہ جو ڈھلا ہوا بے رنگ سا اک تعلق ہے

ہو سکے تو اسے تلخ موت سے بچاؤ

اب مجھ سے ملنے مت آؤ

منزل

 منزل تو ایک دم سادھے فریب ہے

جو راستے میں ہے ہمکتا

وہ ہی تو اصل بھید ہے

جیسے ہماری کوئی انتہا نہیں

بس عُمروں کے طاق میں

جلتی ہوئی کُرید ہے

بارشاں

بارشاں تیرے روپ وانگوں پھُل کھلاندیاں نیں

سُفنے اُگاندیاں نیں

اپنے ہڑ وچ مینوں کتھے دا کتھے لے جاندیاں نیں

فیر مُڑ تیرے چار چفیرے

مینوں دیوے وانگر بالدیاں نیں

تو مندر تے نئیں

نا میں کوئی داسی

پر ایہہ بھید دلاں دے جاندیاں نیں

اے اساڈا اصل پچھاندیاں نیں

بارش”

بدلتی رُت
میرے آنگن میں
الوداعی تحفے رکھ گئی ہے
بارش کے جلترنگ بوسے
بکھرے پتوں کی نم دار پُکار
ایک مسُکراہٹ کی سُنہری بُوند چمک
ایک بُجھی ہوئی یاد کا بھڑکتا کافور!

Above are a few short poems in Urdu & Punjabi, I tweeted yet never posted on my blog. Today, posting them here for record. 🙂

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s