“تعارف “

سُنہرے کانچ کے چاند میں
تمھاری دوری سے چھلکتا
بادہِ لہو رنگ
رقصِ بسمل کرتا ہے
ادائے وصل یار بھی
احیائے رازِ فراق بھی
ہر زہر ساتھ رکھتا ہے
حباب آسا بے وقعت بھی
رزم آرا خلافِ دہر بھی
ماتم ماتم تحلیل ہوتا کوئی
ضبط کی ندی کے کنارے
خندہ زن چلتا ہے
جس کو محدود قیامت کے
لامحدود پل میں
عدمِ نجوم بھی
سُرمئی رات سے بوجھل فلک
کا کوئی نغمہِ طرب لگتا ہے
جو یُوں فاتح ٹھہرا ہے
کہ اُسے درپیش فاصلہ بھی
اپنے طویل جبر پر خود
مبلغِ وفا بن کر
تیشہِ دُشنام سے
حرفِ قدغن لکھتا ہے
وہ زائر، نارِ ابتلا چُوم کر
مُشرف بہ رضا ہو چُکا
وہ اب اُس ماہِ معجزہ گر کا
اُس حدِ قند و قہر کا
اور سالک جدائی کا
سودائی ،اسیر، مسافر ۔۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s