“میں۔۔۔۔۔”

ٹوٹتے تارے دیکھ کر دُعا مانگتا ہوں میں
پل میں مٹی ہونے کا دکھ جانتا ہوں میں
روشنی اُسکی عطا جلن بھی اُسکی دان
حق سے جسے شمعِ مہر پکارتا ہوں میں
فیضِ لذتِ فنا سے لبریز وہ پیمانہِ تغافل
اسرارِ چشمِ زیست نُما کھوجتا ہوں میں
میری بندگی سے بھڑکے اُسکی خدائی
اس دیوانگی سے بُت کو پوجتا ہوں میں
ہر شناسائی میں جلوہ کسکِ گزشتہ کا
ایک ہی شخص میں گرفتار رہتا ہوں میں
کسی مہرباں شب ہمقدم تھے میں اور وہ
اُس منور یاد سے تیرگی کاٹتا ہوں میں
شورش زدہ ساحل پہ تعمیر ہُوں تو کیا
کچے گھروندے میں چٹانیں پالتا ہوں میں
دارِ ہجر بھی بوسہِ وصل سا خواب آلود
وحشت میں خمِ لبِ نشاط دیکھتا ہوں میں 

Advertisements

2 thoughts on ““میں۔۔۔۔۔”

  1. فیضِ لذتِ فنا سے لبریز وہ پیمانہِ تغافل
    اسرارِ چشمِ زیست نُما کھوجتا ہوں میں
    میری بندگی سے بھڑکے اُسکی خدائی
    اس دیوانگی سے بُت کو پوجتا ہوں میں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s