“میں یوں تعلق بچاتا ہوں”

بحث سے پلٹ جاتا ہوں
میں یوں تعلق بچاتا ہوں
دعوہِ سچائی نہیں کرتا
آبروِ نقطہ نظر بچاتا ہوں
نفرت کو خدا نہیں مانتا
مذہبِ انسانیت بچاتا ہوں
رعونت تیزاب ہے گفتگو کا
ظرف جلنے سے بچاتا ہوں
جیتنا میری کمزوری نہیں
دوست کا بھرم بچاتا ہوں
خود احتسابی کا قائل ہوں
نطق، جہل سے بچاتا ہوں

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s