“زوال”

چہرے کے مدہم پڑتے
رنگ و نقوش پر
اپنی ہی نگہِ وحشت
دستک دے
یا جسم کے بےجان گھر
میں کوئی یاد سحاب
تخمِ آرزو جگائے
تو مانو کہ
اک تازہ زرد روح کش افلاس
گردشِ خون میں
درد کے ننھے پتنگے
کاشت کرنے لگتا ہے
کیا ہوا وہ حُسن و ہوش رُبائی
وہ متاع و زیست لٹانے کے حلف
وہ خلد و خرد کے سودے
سب فسانہِ خرامِ وقت ہے
خاکستری ہوتی ہوئی
نسیمِ شمع کا خرمنِ ضیاع

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s