“حق سے رہِ جاناں میں رہا”

نہاں اک امید کے مکاں میں رہا
خوگرِ لاحاصل، امکاں میں رہا
جہانِ عشق وا کیا اُس کے لئیے
اور وہ بُت پردہِ لامکاں میں رہا
گر نہیں تھا حدِ لمس میں کہیں
کیونکر میرے دو جہاں میں رہا
وا ہو گیا میرے کلام میں، کبھی
ذات کے شہرِ خموشاں میں رہا
بکھرا نہیں ہوں، وحشتِ زیست
جوہرِ پندار ترتیبِ جاں میں رہا
توشہِ گریہ کیسا، مئے الم کیا؟
خندہ مست غمِ دوراں میں رہا
محب ہوں، محکوم نہیں اُسکا
نہ مصاحبینِ در خوباں میں رہا
حُسنِ پزیرائی کا مشتاق ہوں
میں حق سے رہِ جاناں میں رہا

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s