کیوں تُو جُدا ہو گیا ہے؟

 وہ تیغِ ہوا ہو گیا ہے

دیے کی سزا ہو  گیا ہے

اسیرِ وفا کر کے مجھے

صیاد بے نوا ہو گیا ہے

اس ہجر کا پھیلاؤ دیکھ

میرا سب ترا ہو گیا ہے

اقدارِ دل کی کج ادائی؟

اختیار، خطا ہو گیا ہے

اُسے وصل عنایت کر

جو تیرا گدا ہو گیا ہے

کبھی مکمل میسر ہو

یاں پھر خدا ہو گیا ہے؟

میرا تجسس سادہ رہا

کیا تُو میرا ہو گیا ہے؟

جو بھرم کی ابتدا تھا

اب میری فنا ہو گیا ہے

ٹوٹتا جا رہا ہوں میں

کیوں تُو جُدا ہو گیا ہے؟

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s