افواجِ پاکستان کے شہیدوں کے نام

احساس
گیلی لکڑی سا سُلگتا ہوا
نارنجی شام کے پسمنظر میں
بے کل کونج جیسا
جرعہِ قضا سے قریب تر کچھ کے
ذائقے کے دامن میں رچا
مگر ابدی سرور کی صورت پر

اور فنا کے مدارج میں
بے آب ستارہِ دل

دُھول ہوتا ہوا
پلکوں پر نم آلود
پُرسہِ چقماق

سانسیں وداعی کے
پھیلے آسیب سےڈر کے
سُکڑتی ہوئی
کہ مادرِ وطن کی فصیلوں پر
ایک اور دلاور بیٹا
گُلِ حیات کی رگیں نچوڑ کے
سُرخ مصفا شمعیں
روشن کر آیا ہے
جو جانباز عہدِ کیا تھا
اُسکی لاج رکھتے ہوئے
دُشمن کی دہلیز پر
اندھیرا مل آیا ہے
امر کے اُفق کے پار جانا تھا
خراج کا تنِ فگار کما لایا ہے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s