تقابل

اُتر رہا ہے محبت کا
زود کرم خمار
عشق کی فصاحت
مجھے قناعت
کے پہلو میں چھوڑ گئی ہے
جس کی حرارت تاپتا ہے
ہجر کے برفاب میں رکھا
روح و بدن کا ربط
خزاں کی رنگین سانسیں
پیڑوں پھولوں پر کیا جھولیں
زوال کی تتلی بھی
ملاقاتوں سے
قُربتوں سے
رس و رنگ چُوس کر
وقت کے جنگل میں
گُم ہوئی
اب یہ اداسی بھی گویا
اک یقینِ مُسلسل ہے
تیرے میرے ہونے
اور پھر نہ ہونے
کا تسلسل ہے
کہ میں
تیری چاپ کے معدوم ہونے
اور خوشبو کے ہوا ہونے
کو بھی
دلاسہ ماننے لگا ہوں
کہ کبھی تو
کہ کبھی تو ۔۔ تُو تھا
اِس ویرانے سے پہلے

تُو تھا

Advertisements

2 thoughts on “تقابل

  1. Salman Rashid

    Just caught you after your comment on Twitter regarding our friend Mughal Bha. Glad I took the time to run through your blog. Good poetry, I must say. Nice to make your acquaintance here.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s