نومبر کی ایک رات

قُلزمِ ماہتاب نہائی رات

چاندنی کے ریشم میں

نم رُو گُھلے

بھول گئی تھی جو 

نقرئی سی بات 

کہرا اپنا ایندھن ساتھ لایا

سرد آہوں میں لپکے 

گورِ وقتِ میں جلتی مات 

 جلترنگِ اشک کیا سُنیں

جو چشمِ سخن میں چٹکے

 جلوہِ برسات

 کوئی صوت ِنور نہیں ساحل شب پہ 

سفینہِ آرزو جھومتا ہے

لگا کے کشِ بحرِ التفات

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s