گھر

نیلے آبِ اُفق میں 

رنگ بہ رنگ ڈوب رہی ہے

نارنجی شام

سُنہرے پروں کا تاج

بجھ کر جھڑ رہا ہے

اور اپنی تلاش کا صدقہ

چُن کر 

پرندہ گھر لوٹ رہا ہے

واپسی کے گیت نے

سرد ہواؤں کی لے پر

محبت لکھی ہے

میٹھی بے چینی کی 

حکایت لکھی ہے

لوٹنے والے کا غرور

پروں میں برق بن کر 

اُڑان کو تابع کر رہا ہے

اس سادہ منظر کی رعنائی میں

تمھارا عکس بھی

ہر احساس میں

سانس لے رہا ہے

تم بھی تو میرا گھر ہو

Advertisements

2 thoughts on “گھر

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s