تشنگی

ہمکلام ہے تیقنِ دل سے ایک محبوب یاد  
وقت کی ستم گری سے باغی

مذہبِ فرقت کی مرتد

دوری کی حدوں کی گستاخ 

آئینہ گاہِ خلوت میں منور ہے

 یوں مشعلِ پرچھائی

وصل یوسف جیسےلےآئے

بینائی کی سوغات

کوزہِ روح میں پگھل گئی ہے

حسرت بن کر 

لاحاصل ہو گئی ہے

دعاؤں میں جو اک بات

زرنگار کوئی کھلا چاہتا ہے دامنِ مشرق میں

اور اشکوں  کے چاند پروتا ہے پلکوں میں یہ خیال 

ہمکلام تو ہو سکتی ہے 

تیقنِ دل سے تمھاری یاد

میں یہ لکھ تو سکتی ہوں 

ہر زاویے سے

شاعرانہ فصاحت سے

راز سی پراسراریت سے

مگر میں چھو نہیں سکتی تمھارے ہاتھ

کتنا ہی زندہ ہو مکالمہِ یاد

کتنا ہی منور ہو چراغِ  قُرب

میں چوم نہیں سکتی 

تمہاری خوشبو اور سانسوں کا سُرتال

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s