دوزخ

خانقاہِ حیات میں جلاؤ

لمبی چُپ کے گنجلک چراغ 

لفظوں کو تہہِ لب جھونکو

سوالات پر چلا دو تیز دھار تلوار

دیوانگی کا گریبانِ چاک سی ڈالو

شرح عقل و جواز سے طے کرو جینے کے آزار 

بن جاؤ کوئی مذہب ساز، کوئی ناگُزیر مسیحا 

یاں پھر کوئی بیوپاری سا کردار

خونِ حق میں ڈبو دو رگِ قلب کا اضطراب

زمانے کی چمکتی نئی دھار میں مِلا ڈالو

اپنے ضمیر کی زنگ آلود بے مایہ پکار

خریدو اپنی سانسوں کو

بیچو اپنا آئینہ اپنا پندار 

یُونہی جینے کی کوئی صورت کرتے رہو 

یُونہی جاں سے جاتے رہو ہر بار




Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s