کارپوریٹ تنہائی

آبدار مکانوں کے اُجاڑ 

چمکیلی راہداریوں کے خم

بے روح جسموں کے عذاب ٹٹولتے ہوئے

سرگوشیوں میں چیختے ہیں

جیسے سُرخ گُلابوں میں

چنگاریاں روئیں

شام کے گہرے نیلے پر بھی

آسیب زدہ ہیں

آرزو کا گراں سایہ لیے

ایسی طلسمی خوشبو سے چُور

جو بہت دور ہو

اور بہت قریب سے آئے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s