مُسرت

یونہی مذاق میں

چُھپائے ہوئے اضطراب میں

وقت کے گھورکھ دھندے سے پرے

لمحے میں جی لیا

اُسے حالِ دل کہہ دیا

کسی ماہر شاعر کے لفظوں میں

کسی امر عشقیہ داستاں میں

تحت العکس اُسے پایا 

لازوال کے سحر کو بیاں کرتے

اپنے حال کا آئینہ اُسے دکھا دیا

بہت اپنا کہا اُسے 

خود کو بھی اُسے سونپ دیا

اک نشست کی گُفتگو میں

بھر خُوشی پیالہ پی لیا

تمام جیون جی لیا


Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s