پہیلی 

آئینے کے مقابل ہے آئینہ  

اور ہر پہلو لامحدود ہے

اپنی ترتیب اور برہنگی میں

میں جھانکتا ہوں تیرے مقبرے میں

جو تیرے ہی اندر تعمیر ہو رہا ہے

تو بھی ناچتا ہے 

مجھ میں پلتے صحرا کے

گرد بگولوں کے ساتھ 

میں جو چہرہ پھیر لوں

تو تیرے حسن کی آنچ بجھ جائے

تو جو پلٹ جائے سامنے سے

میں بھی ڈھے جاؤں بھربھری مٹی سا

آ، الوداعی بوسے میں 

مجھے میری تنہائی سونپ دے

اک پل کو

مجھے اُتار پسِ رگِ جاں

اور اپنی وحشت کو خود سنبھال لے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s