“کیا ہو گر۔۔۔۔”

کیا ہو گر، مآلِ بساط 
جیت و مات سے خام ہو جائے 

دامنِ وصل نہ بھی مہیا کرے

سایۂ ہجر و طلب سے آزاد ہو جائے

زندگی، بصورتِ نخلستاں نہ سہی 

ویرانیِ دشت کا متضاد ہو جائے

تیشہ، دھارِ وصل نہ کھوج پائے

نہ سہی 

مگر محبوب کو الہامِ وارفتگی ہو جائے 

خار ہو جو راہِ عشق کا

خوشبو طرازی نہ بھی کرے

بس مانندِ جرسِ گُل ہمراہ ہو جائے

جو دائم فروزاں ہے رگ رگ میں

وہ نار، درمانِ راحتِ کمیاب نہ بھی ہو

پُرسشِ جاں کو ہی مہرباں ہو جائے

محب چلا چلے کاسۂ خودی لیے

اُس حیات آفرینی سے لب مس نہ بھی ہوں

صدا، حلقۂ نارسائی سے آزاد ہو جائے

کیا ہو گر ۔۔

ہم تم نہ پھیلے رہیں فاصلوں میں

کیا ہو گر،

ہم اسی نظم میں تمام ہو جائیں؟

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s