“خلا ٹھہر گیا مجھ میں”

خلا ٹھہر گیا مجھ میں

کوئی گزر گیا مجھ میں

وحشت جاتی ہی نہیں

خواب مر گیا مجھ میں؟

زوال کی اٹھان تو دیکھ
جنوں اُتر گیا مجھ میں

بہت مُسکرایا میں جب

سناٹا بھر گیا مجھ میں

خوش گفتار ہو گیا ہوں

سچ مُکر گیا مجھ میں

چنار رنگ ہوں تیرا، تُو

خزاں کر گیا مجھ میں

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s