‘قیاس’

چلو، اندھیرے کا زینہ بنائیں

اور چاند کے پاتال میں اتریں

رخشاں بے نوا سے حسرتِ یاس بیاں کریں

اور فاصلوں کو سپردِ خاک کریں 

تمام ستاروں کو پگھلا ڈالیں

اور انڈیلیں خاموشی کی سیاہی پر

ظرفِ کلام دیں بجھارتوں کو

جھرنوں کا شفاف نور 

نچوڑیں اور

وقف کر جائیں

ماۂ حُزن کی عبارتوں پر

چلو، خواہش کا زینہ بنائیں

اور اُسکی آنکھوں کے پاتال میں اتریں

رخشاں بے نوا سے حسرتِ یاس بیاں کریں

اور فاصلوں کو سپردِ خاک کریں

تمام ستاروں کو پگھلا ڈالیں

اور انڈیلیں خاموشی کی سیاہی پر

ظرفِ کلام دیں بجھارتوں کو

اپنی دھڑکنوں سے زندگی نچوڑیں اور 

وقف کر جائیں

اُن آنکھوں کی زیارتوں پر 

Advertisements

One thought on “‘قیاس’

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s