“کہانی تیرے میرے شہر کی”

گھور چُپ میں شہر رواں ہے، مگر
خوف کے بلوے سے آباد نہیں ہوتا

تعصب، سِکہ رائج الوقت طے ہوا

خوب برتو، ایماں برباد نہیں ہوتا

خون ٹھہرا جنسِ خرید و فروخت

اونچی بولی ہو، فساد نہیں ہوتا 

دلیل و سچ، مفاد کے تابع رکھ لو 

مکر و فریب سے زہرباد نہیں ہوتا

نالۂ سائل، خلا میں چھید کرتا ہے 

صاحبِ جاہ پر اثرِ فریاد نہیں ہوتا

حرف و نشترِ نفرت، قضا نہیں ہوتے

اس رسم میں سقمِ تضاد نہیں ہوتا

بانہوں میں بانہیں ہیں اغیار کی 

یار کو یاور کا چہرہ یاد نہیں ہوتا

سوہنی نہ سسی کوئی اب، یہاں 

جوئے شیِر کھودتا فرہاد نہیں ہوتا 

خواہش کترتی ہے سانسیں اُسکی

بندہ مایا جال سے آزاد نہیں ہوتا

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s