تیرِ نیم کش

 ایک محصول افتاد قاتل لمحہ ہے

ایک جان کَنی سا انتظار ہے 

جو ٹھہر گیا ہے

بارشوں کے بعد کے حبس جیسا

ارتقا لذت ہجر سے پہلے کا موڑ

جہاں درد تنہا ہے

بے انت پھیلے سمندر پر اکیلی کونج جیسا

جو اُڑان کو بیچارگی میں

بدلتے دیکھتی ہے

بے آواز گریہ سے مرتعش

ہے جہاں ساری کائنات

جہاں جنوں بھی 

کسی حضر کی پناہ چاہتا ہے

جہاں آوارگی کو خضر درکار ہو

جہاں نہ جی سکتا ہوں

نہ مر سکتا ہوں

جہاں تاک میں ہے 

ہرسیاہ رُو سایہ، ہر رنگ کی بے سروسرمانی 

جہاں اپنے بھیتر کی آغوش کو

ترستا ہے جوگی

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s