ترجیحات

ابرو کے کمان سے

ماہِ فلک کا شکار کرو

جنبشِ لب سے

مُسکراہٹ کے خفیف خم سے

نیا چاند گوندھو

اپنے ہونے سے

اک نگاہ سے

نورِ بہشت میں نہلا دو

اور ماتھے کی کُندن لو سے

کوئی سورج میری جانب 

اچھال دو

یا چاہو تو

مجھے نابینا رند کردو

جو ایک تابانی کی

مدہوشی میں جیتا ہے

جاؤ تو ہر سُر دریا برد کر جاؤ

جو نیلگوں لہجے کے

شیریں چشمے سے

سیراب نہ کر سکو

تو کھاری گدلی دُنیا سے

پیاس اور مٹھاس 

سب لے جاؤ

خوشبو کے پروں پر تعزیر لکھو

مجھے کسی بے آس جزیرے میں

کسی میلے کائی زدہ جنگل میں

خزاں کے حوالے کر جاؤ

کَیا کَیا، کِیا جا سکتا ہے

اک خواہش کا بُت 

خدا کیا جا سکتا ہے

صبر کو پارس 

صنم کو زندہ کیا جا سکتا ہے

ابھی بکھرتا ہے خیال

ہجر کے پیہم نہ ہونے سے

عشق ہو جائے تو 

احساس کو وحی

ایمان کو مکمل کیا جا سکتا ہے

ٹوٹ رہا ہے خمار جیسا

چھا رہا ہے خمار جیسا

اُس کے آنے جانے کو 

مُستقل زخم

مسلسل دوا کیا جا سکتا ہے 

سلسلۂ ملاقات نہیں ہے کوئی 

غافل التفات ہوں، یوں بھی نہیں

تجسسِ فردا میں غلطاں

حال کی بے چارگی سے

نبٹا جا سکتا ہے 

اُداسی یہ ہے کہ 

حوادثِ حیات بازی لے جائیں گے

ہم صلیبِ نارسائی پر

جھول جائیں گے 

یعنی تمہیں بھول جائیں گے؟

اس محال اندیشی پر تو 

مُسکرایا جا سکتا ہے

Story of You & I

You befell like fate, mysteriously

You monopolised the paths 

Leading me elsewhere

I glared like lightening 

You grasped the taut edges of fury

And learnt the secrets of clouds hiding rains 

You like an oath of allegiance

Tied down my directions 

And turned me into a sonnet

Only you could write & rewrite

You mastered my forms

You whispered my name profoundly 

A folksong lit up under my skin

It burnt my robe & ego

Your perfume & breath covered my nakedness 

And like a mirage, like a traveller

I whirred & wandered

I whirred & wandered 

I chose my beginning & end in you

You, a lust storm in my veins

You, poison of love on my tongue

I couldn’t circumvent you

I wanted me seize you

On the verge of imminent death 

In the clasp of possible life 

I became yours 

And you became mine 


حُکمرانی 

اُسکی پرچھائی 

اتنی وضاحت سے

مجھے پڑھ سکتی ہے

میری خاموشی ٹٹول سکتی ہے

میری آواز تھام سکتی ہے

مل جائے تو

تازہ ہجر

شاکی سانس میں 

پھر سے یُوں بھر سکتی ہے

کہ میرے وجود کو

اپنے عدم کا بیاں کر سکتی ہے

دُکھ کی ترکیب 

تحیر سے بدل سکتی ہے

جب چاہے

مجھے منتشر کر سکتی ہے

جب چاہے

اپنے روبرو قائم کر سکتی ہے

“Enlightened”

In the court of heart
His love crowned itself the only ruler

His wrath, thence, couldn’t live 

Within the majestic abode, 

And left sculpting the soul’s path

The soul;

The veritable pilgrim, free breeze, an inexplicable light, 

Transcended all bounds

Permeated every veil 

And saw, love was thrashing all balms

Love was cajoling every wound …

‘Avowal’

If there’s a way

To drink the chalice of your gaze, again,

To have the smothering thirst of my eyes satiated, again,

If there’s a way to lose myself

To the entirety of that measured rain of liquid gold

& to relentless provocation

I’ll let the daggers of hope, they hunt,

And the ghost of time, who haunts, 

Tear me apart

Till the blessed intoxication

Claims her besieged lover.



(Dedicating this one to ‘for you, a thousand times over’, sentence taken from, Khaled Hosseini’s, The Kite Runner.)