حُکمرانی 

اُسکی پرچھائی 

اتنی وضاحت سے

مجھے پڑھ سکتی ہے

میری خاموشی ٹٹول سکتی ہے

میری آواز تھام سکتی ہے

مل جائے تو

تازہ ہجر

شاکی سانس میں 

پھر سے یُوں بھر سکتی ہے

کہ میرے وجود کو

اپنے عدم کا بیاں کر سکتی ہے

دُکھ کی ترکیب 

تحیر سے بدل سکتی ہے

جب چاہے

مجھے منتشر کر سکتی ہے

جب چاہے

اپنے روبرو قائم کر سکتی ہے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s