وجد

اپنی یکتائی سے بہل

گئی تنہائی 

اک محبوب حُزن سے ملی 

گہری شناسائی

جاں کے ذرے ذرے میں

وافر ہے اب تو

چھومنتر رہی جو پرچھائی 

فاصلہ، انتہا کے

ہاتھ رکھ چُکے ہو، رکھو!

ہم تسلیم کے خیمے

سی چُکے ہیں، دیکھو!

کوئی نئے پانیوں کا ناسمجھ خوش پوش 

کوئی گھر میں بھی خانہ بدوش

ہر آرزو سے روپوش

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s