ایک منظر کا قیدی

سُنہری بوسے اکتوبر کی دھوپ کے

جب اُسکی جل جام

آنکھوں کے رنگ کو

نرم لمس سے سرشار کرتے ہیں

میری روح کی خواہش ادا کرتے ہیں

دل کی آشفتہ مزاجی کو رام کرتے ہیں

تیرگیِ جاں کو منور جہاں کرتے ہیں

سُنہری بوسے اکتوبر کی دھوپ کے۔۔۔۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s