خوشبو

سولہ برس پُرانی خوشبو 
زندہ ہوئی ہے 

سینے میں جو اک چراغ جلتا تھا

جہاں اب کارخانۂ زیست چلتا ہے

اُس بنیاد سے اُٹھی ہے

 یہ دلگیر افتاد

میری روح کا پہلا مظہر

میری ذات کا پہلا کشف تھی

اسی خوشبو میں وداع کیا تھا 

میں نے حجاب کا پہرہ 

اس خوشبو کا تعویذ

میرے لبوں کی رنگت بدلتا تھا

میری شفافیت میں گھُلی تھی

اس خوشبو کی تسبیح

اس خوشبو میں لپٹے تھے

سجدے میری خواہش کے

اب اُٹھی ہے پھر 

اپنا یکتا جمال لیے

بھوُلا ہوا آزار لیے 

میری وحشت کی گلیوں میں

ناز سے چلتی ہوئی 

تنفس کی معمول زدہ سیلن میں 

شعلہ رکھتی ہوئی

میرا گُریز پامال کرتی 

صحیفۂ ابدیت پر لکھے اقرار سے

اُٹھی ہے یاد کے نامہرباں دیار سے

سولہ برس پُرانی خوشبو ۔۔۔

Advertisements

سرِ ہجر جیا جا سکتا ہے

سرِ ہجر جیا جا سکتا ہے 

یہ شوق جھیلا جا سکتا ہے

مائل بہ سُخن نہیں وہ، گر

اُنہیں شعر کیا جا سکتا ہے

اُن سے کیسی بازی گری؟

اُن سے ہارا جا سکتا ہے

وہ چشم، سحرِ سیاہ ہے

خوُد کو بھوُلا جا سکتا ہے

جُنوں، تشنہ لب ضدی ہے 

صبر اثیر پیا جا سکتا ہے

قلب نہاں تحت پائے جاناں

خاک است ہوا جا سکتا ہے

آزَرِ آرزوُ ہے عشق، خُدایا

اِسے رام کیا جا سکتا ہے؟

Miracle

There’s a wet thickness in my voice 
It quivers when I say, it’s a fine day

I can’t unclench my hands

They’ve taken hold of my heart and stride

I’m caught in the glance of autumn

My flowers whisper a ruddy golden wish 

Their scent rises like the longing of a traveller

In one leap, I swallow the chaos of the winter sun

All my tenderness bows in wonder

For the movement of his throat is a delight

I can melt my knots in it’s pure call

I might dismiss death as a petty offender

My soul might be the wick of an enchanted candle 

Which only he can aflame

I’m just reborn, reclaimed from the ghost of anonymity

I can flee the oppression of wordlessness

I can rule over the lands of immense joy 

My ships can sink storms 

and tickle stars

I’m no more a stranger, my identity has been restored

In the quiet corner of the old library

He’s asked for my name