سرِ ہجر جیا جا سکتا ہے

سرِ ہجر جیا جا سکتا ہے 

یہ شوق جھیلا جا سکتا ہے

مائل بہ سُخن نہیں وہ، گر

اُنہیں شعر کیا جا سکتا ہے

اُن سے کیسی بازی گری؟

اُن سے ہارا جا سکتا ہے

وہ چشم، سحرِ سیاہ ہے

خوُد کو بھوُلا جا سکتا ہے

جُنوں، تشنہ لب ضدی ہے 

صبر اثیر پیا جا سکتا ہے

قلب نہاں تحت پائے جاناں

خاک است ہوا جا سکتا ہے

آزَرِ آرزوُ ہے عشق، خُدایا

اِسے رام کیا جا سکتا ہے؟

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s