دھندلکا

‫ممکن ہے‬
وقت کا سحر تمھارے انتظار نے باندھا ہو 

ممکن ہے

معمول کی کلائی پر

ویران دل درگاہ کی دیوار پر

کسی نئے منتر کا

کسی نئی منت کا

سُرخ دھاگہ لہلہاتا ہو 

ممکن ہے

‫جس کو تم اپنی اسیری کہتے ہو

اس کی گرفت میں

خاموش رہتا راز ہمارا ہو

‫ممکن ہے 

حُسن کا، ادا کا شجر ہرا بھرا بس یونہی ہو

اور دھیان میں اُسکے سایہ تمہارا‫ ‬ہو

ممکن ہے

گلی کوچوں میں، زندگی میں 

بھاگتے رہنامحض دکھاوا ہو

ممکن ہے

ہر قدم اپنی آمادگی میں

ہر ٹھہراؤ اپنی سادگی میں

تمھارے ‫د‬ر تک آیا‫ ‬ہو


Advertisements