“Light is there”

The crucifying curve of dying moon

My soul screams in its mouth

It pierces my throat with the pale flickering of its thin form

And I find my voice walking on the pyre of hopes

But there’s a name 

It can salve the wounds

It can maim the big body of darkness

There’s a touch which can gouge the blindness of dreams

I’ve to con my way to that immortality

To nourish my thoughts 

To heal my tiredness

I want a morsel of beloved’s touch, 

a feather of his blessed kiss 

The silence coats my tongue with its sandpapery taste

This knowing has become a thorny noose 

And you know;

This waning moon smells like a butcher’s knife

I’m a lonesome tree in the desert of its cruel smile

Though my pride is adamant

My crown shivers for the nakedness of fear

My heart could burn the forests of questions

Yet the hell of distance can’t be doused by tears

Though my certitude, my answers are meagre 

In a contrite starved shape of inescapable love

Light is there

Light is there 



فنا فی عشق

یہ جو نمازِ شوق میں عُمر سے گھرا ہوا ہوں

دُعا کی ہتھیلی میں کلامِ جنوں لیے

ایک ہی شخص کے سامنے جُھکا ہوا ہوُں

میں فنا فی عشق ہوا ہوں

یہ جو مکینِ عیون ہیں، جگنو نمدار سے 

خاکِ جان میں تو رواں رہتے ہیں نار سے

ہجر کی سخاوت سے کنارے تک بھرا ہوا ہوں 

میں فنا فی عشق ہوا ہوں

یہ جو وحشی سی کمی ہے، کیا کمی ہے؟

وجود کی بے ثباتی میں یہی تو کھری ہے

عدم کی چاہ میں میسر کا مُنکر ہوا ہوں

میں فنا فی عشق ہوا ہوں

اب جُدائی ممکن نہیں رہی ہے

اب میں کو تُم لکھ رہا ہوں

اب تُم کو میں پڑھ رہا ہوں

میں فنا فی عشق ہوا ہوں

پردیس میں۔۔۔

ہر تیرگی سے اُلجھ کر جیتا ہے تیرے چہرے کا نور


ہر بزم میں چراغاں ہے تیرے خیال کے سائے کا

ہر خلوت میں رُوبرو ہے تیری چشم کی اُکساتی لو

ہر رُخسار پہ جگمگاتا ہے تیری جدائی کا آنسو 

ہر خمِ لب پر چھلکی ہے تیری پیاس کی ضیا

ہر جسم سے اُٹھا ہے تیری جانب کوئی بانہیں پھیلائے

ہر روح کے دشت میں تیرے ساون کی پیاس ہے

گلیاں تیرے قدموں کی امید سے مخمل ہیں

ہوا تیری خوشبو کے بوسے کھوجتی دیوانی ہے

آسمان تیرے لیے شمس و قمر کی نیاز لیے جھکتا ہے

میں یہاں بھی تیرے عشق میں تونگر ہوں

میں یہاں بھی تیرے لیے سر تا پا کشکول ہوں

تُو یونہی میرا محرم و غنی ہے

میں یونہی تیرا محروم و مفلس ہوں

تجھ سے کچھ بھی مبرا نہیں 

اور میں تجھ سے ابھی بھی بھرا نہیں

Recognition

‪You’re not just a name ‬‪(A lyrical clasp around my sharp desire to speak) ‬

You’re not just a face 

(Brilliantly kissing the ardour of my body)

Nothing can identify you, as you

For you’re the magnitude of all love, lightening the world

And you’re the depth of all longing, possessing the universe

Nothing can know the heaven of your voice, within me 

Nothing can know the hell of your loss, within me

No sin is as delirious as the simplicity of loving you

No lust can anticipate the joy of breathing in your fragrance

Nothing can determine the eternity of your touch; the solace I travel towards yet can’t reach

You’re infinite, my magician

I can’t count or classify you

You’re horizon, you’re gravity

You’re the heart within the heart

And you’re the entirety of my being 



چوتھا بعد

‎میں تمھارے ساتھ
‎وہ آنسو رو سکتی ہوں

‎وہ آہیں کراہ سکتی ہوں

‎جو روح کے آئینے میں

‎درِ جسم سے جھانکتی ہیں

‎جو خاموش تازیانہ ہیں

‎ہجر کا ہرجانہ ہیں

‎میں تمھارے لیے

‎وہ حاشیے مٹا سکتی ہوں

‎وہ گرہیں کھول سکتی ہوں

‎جو وقت نے راستوں پر

‎نوکِ جبر سے کھینچیں

‎جو فیصلوں کے نطق میں

‎لکھی گئیں

‎جو درد رہیں جو دار ہوئیں

‎میں تمھارے ساتھ حجاب بانٹ سکتی ہوں

‎اور ظاہر جھٹلا سکتی ہوں

‎ میں تمھاری ہر حد تک جا سکتی ہوں 

‎میں تمھیں اپنا مرکز بنا سکتی ہوں

‎میں تمھارے لیے پھر سے

‎وجود پا سکتی ہوں

اور چاہو تو عدم تک آ سکتی ہوں 


Demarcation 

‪I’m living with you, in separation, in exile‬


‪Every breath is a citizen of your love‬

‪Every gaze, a seeker of your glimpse‬

‪I am a wandering symbol of your permanence

‪You’re the only constant, ‬

‪And I’m in every variable, fulfilling your equations‬

‪Yet, My darling, the paths aren’t going to unite‬

‪Parallels wouldn’t embrace the peace of confluence

‪This exile is marked on bones & flesh;‬

‪A poetic imprint on each other’s soul,‬

‪A collection of frozen sorrows,‬

‪And recollection of tropical sensual laughters‬