شکست کے ملال کو بوسہ

مسافت کی طوالت ہے ایسی

کہ وصل کا پارس تو کیا میسر ہو

ہجر بھی کامل خسارہ نہیں

میں خود اپنی تلاش میں ہوں

زمانے کو یہ اہتمامِ شوق گوارا نہیں

تمھارے جسم کا ساحر چراغ ہو

یا روح کی پشیمان کرتی سادہ لوحی

میری طلب یک پہلو نہیں

میری حد کو گناہ ثواب کا گوشوارہ نہیں

ساتھ چلنا ہو یا الگ بھٹکنا ہو

کنارا ڈھونڈنا ہو وحشت کا

یا منجدھار میں جنوں اچھالنا ہو

ہنستے ہوئے خاک بر ہونا ہو

کہ راکھ میں نارِ جہنم پالنا ہو

کسی بہشت کو تو سلیقۂ انتہا ہو

کوئی گھڑی تو آئے پوری شان سے

کسی افق سے کوئی بولے

میرے دامن میں کوئی ٹوٹتا تارہ نہیں

گورنشیں کو ازبر ہے گریۂ آرزو

یا زندگی بنجر خواب ہے

میرا راز مجھ پر نہیں کھلتا

میرا اذنِ کُن بھی رائیگاں ہے

میری صدائے فغاں بھی زیاں کوش

کیا کہوں کہ

جیون جال تنگ ہوتا جاتا ہے

اور مزاجِ اجل رسم آرا نہیں

ہو سکتا ہے میری بنیاد دہل گئی ہو

یا میرا آسماں قیامت پکارا ہو

کچھ ہار گیا ہے مجھ میں

و گرنہ میں تو کبھی ہارا نہیں

Advertisements

دھندلکا

‫ممکن ہے‬
وقت کا سحر تمھارے انتظار نے باندھا ہو 

ممکن ہے

معمول کی کلائی پر

ویران دل درگاہ کی دیوار پر

کسی نئے منتر کا

کسی نئی منت کا

سُرخ دھاگہ لہلہاتا ہو 

ممکن ہے

‫جس کو تم اپنی اسیری کہتے ہو

اس کی گرفت میں

خاموش رہتا راز ہمارا ہو

‫ممکن ہے 

حُسن کا، ادا کا شجر ہرا بھرا بس یونہی ہو

اور دھیان میں اُسکے سایہ تمہارا‫ ‬ہو

ممکن ہے

گلی کوچوں میں، زندگی میں 

بھاگتے رہنامحض دکھاوا ہو

ممکن ہے

ہر قدم اپنی آمادگی میں

ہر ٹھہراؤ اپنی سادگی میں

تمھارے ‫د‬ر تک آیا‫ ‬ہو


خوشبو

سولہ برس پُرانی خوشبو 
زندہ ہوئی ہے 

سینے میں جو اک چراغ جلتا تھا

جہاں اب کارخانۂ زیست چلتا ہے

اُس بنیاد سے اُٹھی ہے

 یہ دلگیر افتاد

میری روح کا پہلا مظہر

میری ذات کا پہلا کشف تھی

اسی خوشبو میں وداع کیا تھا 

میں نے حجاب کا پہرہ 

اس خوشبو کا تعویذ

میرے لبوں کی رنگت بدلتا تھا

میری شفافیت میں گھُلی تھی

اس خوشبو کی تسبیح

اس خوشبو میں لپٹے تھے

سجدے میری خواہش کے

اب اُٹھی ہے پھر 

اپنا یکتا جمال لیے

بھوُلا ہوا آزار لیے 

میری وحشت کی گلیوں میں

ناز سے چلتی ہوئی 

تنفس کی معمول زدہ سیلن میں 

شعلہ رکھتی ہوئی

میرا گُریز پامال کرتی 

صحیفۂ ابدیت پر لکھے اقرار سے

اُٹھی ہے یاد کے نامہرباں دیار سے

سولہ برس پُرانی خوشبو ۔۔۔

سرِ ہجر جیا جا سکتا ہے

سرِ ہجر جیا جا سکتا ہے 

یہ شوق جھیلا جا سکتا ہے

مائل بہ سُخن نہیں وہ، گر

اُنہیں شعر کیا جا سکتا ہے

اُن سے کیسی بازی گری؟

اُن سے ہارا جا سکتا ہے

وہ چشم، سحرِ سیاہ ہے

خوُد کو بھوُلا جا سکتا ہے

جُنوں، تشنہ لب ضدی ہے 

صبر اثیر پیا جا سکتا ہے

قلب نہاں تحت پائے جاناں

خاک است ہوا جا سکتا ہے

آزَرِ آرزوُ ہے عشق، خُدایا

اِسے رام کیا جا سکتا ہے؟

Miracle

There’s a wet thickness in my voice 
It quivers when I say, it’s a fine day

I can’t unclench my hands

They’ve taken hold of my heart and stride

I’m caught in the glance of autumn

My flowers whisper a ruddy golden wish 

Their scent rises like the longing of a traveller

In one leap, I swallow the chaos of the winter sun

All my tenderness bows in wonder

For the movement of his throat is a delight

I can melt my knots in it’s pure call

I might dismiss death as a petty offender

My soul might be the wick of an enchanted candle 

Which only he can aflame

I’m just reborn, reclaimed from the ghost of anonymity

I can flee the oppression of wordlessness

I can rule over the lands of immense joy 

My ships can sink storms 

and tickle stars

I’m no more a stranger, my identity has been restored

In the quiet corner of the old library

He’s asked for my name 

‘To Her’

‪In the wary crease above my brows 
The faded cheer of your caresses speaks 

Or is that your fresh water sparkling laugh, singing?

It cleans the sky for me

(You know, without you, the sky is blotchy & small)

I seem, now, to smile at stars

Their glow is borrowed from your forehead 

See, I know your address, now, My abundantly bright!

Clad in absolute layers of absence

You can elude me 

If it’s not for my soul 

(My soul lives in the clasp of your fragrance)

You crystallise me into a living mass of nostalgia

When my darkness gallops

Leaving me swallow its thorny silence

I drink from your memory 

I make a potion from your chosen endearments 

(you decorated me with your love)

Stains of your favourite lipstick, silk of your last worn scarf 

I squeeze familiarity from them all

And I let my lurking stranger self bathe in it

Slowly, I emerge from my tired pile to walk with life 

In the corpse white days of lingering by

I feel your shimmery hazel gaze

Curling around my anxiety 

And greying of my cheeks & hair

(Your eyes, nectar from heaven-flowers) 

I cease existing like a dead old leaf

I dodge the spy of winter & bitterness

I bloom into your darling moringa flower

There’s no tomb to bury my hunger for you 

My thirst for your love, mocks deserts

My peace can’t breathe without your bosom 

There’s no permanence for me 

I’m between your shadow & my pining for your skin


(For my beloved beloved mom; you’re as alive as I’m, maa)

استثنا 

وقت کے مور پنکھ 
کتاب کے پسندیدہ اوراق میں

تا ابد بچھا سکتے ہو؟

کچی دیوار پر جب

بارش کا کانچ ٹوٹے

یا قدحِ شب میں

مئے نجوم چھلکے

تو ٹوٹنے اور چھلکنے کے 

کوئی آداب بتا سکتے ہو؟

خوشبو کے پہلے مست قدم کو 

وصل کے جنوُں کو

کیا قرینہ سکھا سکتے ہو؟

پہلی محبت کی شکست کو

کُچھ مداوا سمجھا سکتے ہو؟