Dissection

All poetry has died;

It died witnessing lovers thrusting eternities into measured time slots,

Word by word, love-letters took off their yearning and became caveats,

Poems breathed like a war-stricken quiet child who’s never really alive.

All songs have fled;

They fled the hearts of women who opened their bosoms to trembling beloveds,

The women who softly held the callous hands of warriors & became goddesses,

The women with pearl eyes & silken skin, then, dissolved into glass shards.

Every prayer fell into darkness;

The darkness which maddens men to maim smiles of proud tulips,

The darkness which lives within the beasts who hunt with full belly but hungry hearts.

It’s as if you’ve looted all the treasures-

All the poetry, songs & prayers.

It’s as if the whole universe became one hot bruise & seeped into my soul.

Advertisements

بارش

رم جھم پیتے راستوں پر روشنیاں ناچیں

ان گنت رنگ

آس کے، قُرب کے

مچلتے زاویے

بہشت کے، نئے جہانوں کے

اپنے پھیلاؤ سے دم بخود

اور اپنی ہی خواہش کے گرداب میں

بھیگی ہوا میں

اُن بوسوں کے جال

جو زندگی اُچک لیں

ایسے جال، جِن کی تاک میں دل ماہی انداز

جن کے حلقے پر ساحل، کنارے، تہذیب قُربان

جن کی آغوش میں پیاس حج کرے

جو ہونٹوں سے ادا ہونے سے پہلے

روحوں کا عہد و پیمان ہوں

حرکیت

میں چھاتے کی طرح آگہی

کندھے پر اٹھائے چلتا رہتا ہوں

کسی آمر کی طرح جنوُں

اپنے تابع کرنے کی چاہت میں

خود میں گھٹتا رہتا ہوں

میں بڑھتا ہوں سچ کی طرف

پھر اسکی نزدیکی سے جھُلستا رہتا ہوں

جانے کِس ٹھنڈک کو کھوجنے میں

برف زاد لہجوں سے چوٹ کھاتا رہتا ہوں

کسی دلفریبی کی چھاؤں میں رہتا تو ہوں

میں شوقِ وصل یار سے بہلتا تو ہوُں

مگر دامنِ وارفتگی میں بے ثمری کے چھید

تیرے میرے بیچ لفظوں کے بھید

میری بُنت میں بھی خلا ٹانکتے ہیں

چُپ میں بھی فساد اُچھالتے ہیں

میں وہ خلا کاٹتا رہتا ہوں

میں ہماری چُپ جوڑتا رہتا ہوں

سوالوں کے آتش داں میں

معنی کے گُل و نجوم

جوابات سے پرے راز کا بیکراں سمندر

میں یہ خزانے کھوجتا رہتا ہوں

میں اپنی مٹی زرخیز کرتا رہتا ہوں

بکھرتا ہوں جب حدِ نظر و فہم تک

میں نئی دُنیاؤں میں منقسم ہوتا رہتا ہوں

اُٹھ کر بوسیدہ بُت کے پہلو سے

میں نئے اصنام پر ہنستا رہتا ہوں

خدا ہوتے لوگوں پر زوال پڑھتا رہتا ہوں

Conversations to Self!

I don’t know why but the more I look into the meaning of Allah’s name “Al – Fattah” I’m more in awe of its beauty & the silent consolation it provides. It’s many meanings but what palms my heart in the most gentle companionable manner is ‘the opener of portals or every or any closed door/wall etc’. It gives me life that there’s the Lord who owns this idea of opening up & revelation of what’s hidden. His ‘Kun’ is all it needs to tear us apart or put us back in a whole. When I’m wholly cornered or blocked by anything/anyone, it’s this attribute of Allah which shores up what’s broken within me. I’ve seen fair share of darkness, closed paths & blackened hearts. There was nothing but Him who showed light & the way forward. In Arabic we call key مفتاح الباب which translates into ‘door’s key’ & I think about the one who can open the door(s) & even the heart of those who close the doors.

تیرے کُن اور یہ لب، میں طلب ہی طلب

توُ عطا ہی عطا، یا فتاح یا فتاح

تبصرہ

سوال جواب ۔۔ مصلحتوں میں گُم ہیں

تمھیں الفاظ کا چناؤ دشوار ہے

ہمیں ادائیگی کا بار ڈراتا ہے

خاموشی گویا حفاظتی خندق ہے

ایک جنگی حکمتِ علمی

جس پر ہم عمل پیرا ہیں

دیکھو تو

وہمات خدشات

چال، وار

جیت کا جشن مناتے ہیں

ہم تُم

اندر ہی اندر دفن ہوتے جاتے ہیں

میں تیرے ہونے کا ہونا ہوں

میرا کوئی سرا یا پہلو نہیں

مجھے کسی عدم کا خوف

کسی وجود کا انتظار نہیں

میں نہ عیاں چاہتا ہوں

نہ کسی انضمام کا طلبگار ہوں

میں تیرے ہونے کا ہونا ہوں

میں تیری بقا کا ساتھی

میں تیری فنا کا ہمراہی

میں تیرے ہجر کا آنسو

میں تیرے وصل کا بوسہ

میں تیری گرمجوشی میں تیری فراموشی

میں تیرے ہونے کا ہونا ہوں

میرا کچھ نہیں

میں کچھ نہیں

اندھیرا و اجالا

سیاہ و سفید

حال و وجد

میرا کوئی سفر نہیں

میں تجھ میں کھِلتا

تجھ میں بجھتا کچھ ہوں

میں دھواں میں شمع

میں چراغ میں دربدری

میں نہیں میں نہیں

میں۔۔۔ تیرے ہونے کا ہونا ہوں

Abandon

At the end of every day

After spending myself on obscure forms of love,

All forms of every love..

After lapping up sharp and dull disappointments,

Every drop & countless seas of disappointments..

After trading pains & passions

After getting tired of calling people, homes

After braving temporary abodes & forever riddles

I untangle myself from mandatory wisdom of living

I renounce the luxury of not looking into myself

I come back to the oldest dream of soul,

Flowing within like the first sign of life in every new civilisation,

I settle down at its bank.

I shatter, shatter & shatter,

Becoming many small needy stones,

I Jump into deep waters of your vast absence..