Conversations to Self!

I don’t know why but the more I look into the meaning of Allah’s name “Al – Fattah” I’m more in awe of its beauty & the silent consolation it provides. It’s many meanings but what palms my heart in the most gentle companionable manner is ‘the opener of portals or every or any closed door/wall etc’. It gives me life that there’s the Lord who owns this idea of opening up & revelation of what’s hidden. His ‘Kun’ is all it needs to tear us apart or put us back in a whole. When I’m wholly cornered or blocked by anything/anyone, it’s this attribute of Allah which shores up what’s broken within me. I’ve seen fair share of darkness, closed paths & blackened hearts. There was nothing but Him who showed light & the way forward. In Arabic we call key مفتاح الباب which translates into ‘door’s key’ & I think about the one who can open the door(s) & even the heart of those who close the doors.

تیرے کُن اور یہ لب، میں طلب ہی طلب

توُ عطا ہی عطا، یا فتاح یا فتاح

Advertisements

تبصرہ

سوال جواب ۔۔ مصلحتوں میں گُم ہیں

تمھیں الفاظ کا چناؤ دشوار ہے

ہمیں ادائیگی کا بار ڈراتا ہے

خاموشی گویا حفاظتی خندق ہے

ایک جنگی حکمتِ علمی

جس پر ہم عمل پیرا ہیں

دیکھو تو

وہمات خدشات

چال، وار

جیت کا جشن مناتے ہیں

ہم تُم

اندر ہی اندر دفن ہوتے جاتے ہیں

میں تیرے ہونے کا ہونا ہوں

میرا کوئی سرا یا پہلو نہیں

مجھے کسی عدم کا خوف

کسی وجود کا انتظار نہیں

میں نہ عیاں چاہتا ہوں

نہ کسی انضمام کا طلبگار ہوں

میں تیرے ہونے کا ہونا ہوں

میں تیری بقا کا ساتھی

میں تیری فنا کا ہمراہی

میں تیرے ہجر کا آنسو

میں تیرے وصل کا بوسہ

میں تیری گرمجوشی میں تیری فراموشی

میں تیرے ہونے کا ہونا ہوں

میرا کچھ نہیں

میں کچھ نہیں

اندھیرا و اجالا

سیاہ و سفید

حال و وجد

میرا کوئی سفر نہیں

میں تجھ میں کھِلتا

تجھ میں بجھتا کچھ ہوں

میں دھواں میں شمع

میں چراغ میں دربدری

میں نہیں میں نہیں

میں۔۔۔ تیرے ہونے کا ہونا ہوں

Abandon

At the end of every day

After spending myself on obscure forms of love,

All forms of every love..

After lapping up sharp and dull disappointments,

Every drop & countless seas of disappointments..

After trading pains & passions

After getting tired of calling people, homes

After braving temporary abodes & forever riddles

I untangle myself from mandatory wisdom of living

I renounce the luxury of not looking into myself

I come back to the oldest dream of soul,

Flowing within like the first sign of life in every new civilisation,

I settle down at its bank.

I shatter, shatter & shatter,

Becoming many small needy stones,

I Jump into deep waters of your vast absence..

Pitfall

I’m drawn to ruins,

which are more compact than life.

I’m summoned by the wild darker nights,

which travel from heaven to the petals of jasmine,

Nights which live in the irises of thirsty tribal women.

I live for that moment, that regular opening of miracle,

When the sun blooms on the eastern horizon,

Heralding the beginning of the magic

Which withers as a day walks by to the western shores,

I merged my joy & sorrows into that sea of fleetingness.

I’m into small moments of openness

Which build a mirror between two souls

Which don’t bow to set patterns & stale language.

I’m that ephemeral who nurtures her own features

Who isn’t seduced by the culture of one life & death.

Do you know what’s ephemeral ?

It’s the sense of having all,

Feeling & touching all,

Yet travelling to new essences & meanings.

I’m to write an odyssey of all that can’t be caught in words

And I’m to write life, its cunning & capitulation,

And I told you I’m drawn to ruins!!

بچا کیا ہے وضاحتوں کے سوا

بچا کیا ہے وضاحتوں کے سوا

تعلق نہیں رہا قباحتوں کے سوا

دل کی دربدری ہی اچھی تھی

وصل ملا ہے راحتوں کے سوا

کوئی پڑاؤ مستقل نہیں رہتا

ٹھہراؤ نہیں ہوا آفتوں کے سوا

خاموشی کو فراموشی نہ کہہ

اپنا کیا ہے رفاقتوں کے سوا؟

حقِ جنوں تو زباں بندی ہے

کلام نہیں کرتا علامتوں کے سوا

کیا داستاں پڑھیں ہمنواؤں کی

کچھ نہیں درج رقابتوں کے سوا

شعور کو شوق ہے تنہا اڑان کا

کوئی چارہ نہیں حمایتوں کے سوا

وہ محبوب سے خدا ہوا تو ہم

دامن جھاڑ چلے حاجتوں کے سوا

تھکن

کسی دن بیٹھ کر صبح کے چوراہے میں

اپنی خاموش کڑھتی

گرم سیل بہاتی آنکھوں کا طوق اتاریں گے

اور ساری روشنی

تمھارے خد و خال پر نچھاور کریں گے

زباں بندی سے جو

روح پر آبلے ہیں

اُن کی سرکش دہائی بادِ صبا میں لپیٹ کر

ہر حد کے پار بھیجیں گے

اور تمھارا نام مرہم کی طرح

پکاریں گے

قبائے انا کے سب تار

کھول کر

تمھارے لیے رقصِ جنوں کریں گے

تمھیں، تمھاری محفل میں انجان کریں گے

اپنے سلاسل سے نکلیں گے

تمھارے اپنے ممکنات یکجا کریں گے

دو کنارے ، ایک کشتی میں بھر کر سمندر پار کریں گے

مگر اس لمحے، اس زندگی میں

تم سے پناہ چاہتے ہیں

نباہنے والے اب نجات چاہتے ہیں